July 14, 2024

اردو

اردو

کیا کوئی تشکیل کے نظریے کو قبول کر کے خُدا خالق پر ایمان رکھ سکتا ہے؟

کیا کوئی تشکیل کے نظریے کو قبول کر کے خُدا خالق پر ایمان رکھ سکتا ہے؟ - خُدا پر ایمان لانا

کیا کوئی تشکیل کے نظریے کو قبول کر کے خُدا خالق پر ایمان رکھ سکتا ہے؟

جی ہاں۔ اگرچہ یہ ایک مختلف قسم کا علم ہے، ایمان سائنس کے نتائج اور نظریات پر بھی نظر رکھتا ہے۔ علم ذات میں کوئی سائنسی صلاحیت نہیں ہے، اور قُدرتی سائنس میں کسی بھی قسم کی علم ذات کے متعلق صلاحیت نہیں پائی جاتی۔ قُدرتی سائنس خود سے دُنیا کی تخلیق کے حوالے سے بامقصد عمل ظاہر نہیں کرسکتی۔ اِس کے برعکس ایمان اِس چیز کی وضاحت نہیں کرسکتا کہ قُدرت کی نشوونما کا عمل کیسے پورا ہوتا ہے۔ ایک مسیحی تشکیل کے نظریے کی وضاحت کو مددگار کے طور پر قبول کر سکتا ہے، مگر وہ تشکیل کے عمل کی وضاحت کا شکار نہ ہو، جو کہ اِنسانوں کو حیاتیاتی عمل کی بے ترتیبی مصنوعات کے طور پر سمجھتا ہے۔

تشکیل پہلے سے فرض کی ہوئی چیزوں کے وجود کو ظاہر کرتی ہے جن کی نشوونما ہو سکے۔ یہ نظریہ اِس بارے میں کوئی وضاحت پیش نہیں کرتا کہ یہ سب چیزیں کہاں سے وجود میں آئیں۔ مزید یہ کہ وجود کے حوالے سے سوالات، روح، عظمت، مہم، ترجمہ اور دُنیا کے بارے میں، جن کا اِنسان کو حیاتیاتی عمل کی بنیاد پر جواب نہیں دیا جا سکتا۔ جیسے تشکیل کا عمل ایک طرف ضرورت سے زیادہ قدم بڑھاتا ہے ویسے ہی تخلیق بھی دوسری طرف یہی کرتی ہے۔ تخلیق کار لغوی معنی کے لحاظ سے بائبل کا علم لیتے ہیں، مثال کے طور پر دُنیا کی عمر معلوم کرنے کے لئے وہ پیدائش کی کتاب کے پہلے باب میں سے دُنیا کے بننے کے چھ دن کے عمل کا حوالہ لیتے ہیں۔

Facebook
Twitter
LinkedIn

RELATED ARTICLES